63

”طاق راتوں میں دو نفل نماز کن فیکون اللہ خود آواز لگاتا ہے مانگ لو جو مانگنا“

اللہ تعالیٰ کامہمان مہینہ یعنی رمضان المبارک اس وقت اپنے آخری مراحل میں داخل ہوچکا ہے۔

اور طاق راتیں جو کہ رمضان المبارک کی بابرکتیں راتیں ہوتی ہیں۔ جن میں سے ایک رات “لیلتہ القدر” کی رات ہے ۔

ان طاق راتوں کے اندر اللہ تعالیٰ کی عبادت کیسے کی جائے ؟ کونسا سا ایسا خاص طریقہ کار ہے جس کے ذریعے اگر آپ ان طاق راتوں کے اندر عبادت کرتے ہیں۔ اللہ تعالیٰ کی ذات آپ پر اپنا فضل وکرم کرتی ہے۔ اور رزق کی برکت کے لیے ان آخری طاق راتوں کے اندر کونسا ایسا عمل کیاجانا چاہیے یہ آپ کو بتائیں گے ۔ اور ساتھ ساتھ آپ کو ان طاق راتوں کی فضیلت کے بارے میں بھی آگاہ کریں گے ۔

آخر ی جو طاق راتیں ہیں ۔ ان میں ہر طاق رات کے اندر اگر آپ دو رکعت نماز نفل خاص طریقے سے پڑھیں گے ۔ انشاءاللہ! اللہ کی ذات آپ کی ہرحاجت کو پورا فرمائے گا۔ وہ رحیم ہے۔ کریم ہے ۔ وہ ہر چیز پر قادر ہے۔ اس کی رحیمی کریمی کو کسی شخص کو ئی واسطہ نہیں۔ اس کی کوئی ایسی آتھاہ نہیں اس سمند رکی جہاں پر وہ آکر ختم ہوتی ہو۔ وہ انسان کو اتنا عطا کرتا ہے

جتنا انسان اسے مانگتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کے خزانوں میں کسی چیز کی کوئی کمی نہیں۔ لہٰذا ہم آپ کو بتائیں گے کہ آپ نے جو عمل کرنا ہے ۔ آپ نے اللہ پا ک سے صدقے دل سے دعا مانگنی ہے۔ انشاءاللہ! دعا شرف قبولیت حاصل کرے گی۔ آپ نے کرنا کچھ یوں ہے۔ کہ آپ نے دور کعت نفل ہر طاق رات میں کچھ اس طرح پڑھنی ہے۔ کہ آپ نے ہر رکعت میں ” سورت الفاتحہ” کے بعد تین مرتبہ “سورت القدر” پڑھنی ہے۔

پھر اس کے بعد تین مرتبہ “سورت اخلاص ” پڑھنی ہے۔ پھر اس کے بعد جب آپ نماز مکمل کرلیں۔ پہلی رکعت میں سورت الفاتحہ کے بعد تین مرتبہ ” سورت القدر” اور تین مرتبہ ” سورت اخلاص ” پڑھ لیں۔ دوسری رکعت میں سورت الفاتحہ کے بعد تین مرتبہ ” سورت القدر” اور تین مرتبہ ” سورت اخلاص ” پڑھ لیں۔ جب نما ز کا اختتام کرنا ہے۔ یعنی یہ نفل نماز مکمل کرنی ہے۔

سلام پھیرنا ہے ۔ اس کے بعد ” استغفار ” ستر مرتبہ پڑھناہے۔ جو درود پاک ہے۔ آپ نے درود پاک ستر مرتبہ پڑھنا ہے۔ کوشش کریں کہ درود پا ک آپ درود ابراہیمی پڑھنا ہے ۔ پھر سجدے میں چلیں جائیں ۔ اور سجدے میں جا کر اللہ تعالیٰ کی ذات سے جو بھی آپ کے من کی حاجت ہے۔ وہ صدقے دل سے مانگنا شروع کریں۔ انشاءاللہ ! اللہ تعالیٰ کی ذات آپ کی جو حاجت ہے اس کےعین مطابق جو آپ کے لیے بہتر سے بہترین چیز ہوگی۔

وہ عنا یت فرمائے۔ رمضان المبار ک کا مہینہ بڑا ہی بابرکت مہینہ ہے۔ اور اس کے آخری عشرے میں ایک رات جس میں عبادت ہزار مہینوں کی عبادت سے افضل ہے۔ طاق راتوں میں تلاش کریں شب قدر کو۔ جو لوگ عبادت کرلیتے ہیں۔ اللہ پا ک اس کو قبول فرماتا ہے۔ اس مہینے میں انسان جتنی پابندی کرتا ہے۔ اور بقیہ مہینوں میں بھی اسی طرح پابندرہیں۔ شب قدر عظیم اور فضیلت والی رات ہے اس کے ساتھ تقدیر ساز رات ہے۔ اللہ تعالیٰ اس رات کو تقدیروں کا فیصلہ فرماتا ہے۔ا ور اس رات کی عبادت ہزار راتوں کی عبادت سے افضل ہے۔

50% LikesVS
50% Dislikes

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں